Jump to content
Guests can now reply in ALL forum topics (No registration required!) ×
Guests can now reply in ALL forum topics (No registration required!)
In the Name of God بسم الله

Noha Writeups


Recommended Posts

  • Advanced Member

مرثیۂ امام ۔ فیض احمد فیض

رات آئی ہے شبّیر پہ یلغارِ بلا ہے

ساتھی نہ کوئی یار نہ غمخوار رہا ہے

مونِس ہے تو اِک درد کی گھنگھور گھٹا ہے

مُشفِق ہے تو اک دل کے دھڑکنے کی صدا ہے

تنہائی کی، غربت کی، پریشانی کی شب ہے

یہ خانۂ شبّیر کی ویرانی کی شب ہے

دشمن کی سپہ خواب میں‌ مدہوش پڑی تھی

پل بھر کو کسی کی نہ اِدھر آنکھ لگی تھی

ہر ایک گھڑی آج قیامت کی گھڑی تھی

یہ رات بہت آلِ محمّد پہ کڑی تھی

رہ رہ کے بُکا اہلِ‌حرم کرتے تھے ایسے

تھم تھم کے دِیا آخرِ شب جلتا ہے جیسے

اِک گوشے میں‌ ان سوختہ سامانوں‌ کے سالار

اِن خاک بسر، خانماں ویرانوں‌ کے سردار

تشنہ لب و درماندہ و مجبور و دل افگار

اِس شان سے بیٹھے تھے شہِ لشکرِ احرار

مسند تھی، نہ خلعت تھی، نہ خدّام کھڑے تھے

ہاں‌ تن پہ جدھر دیکھیے سو زخم سجے تھے

کچھ خوف تھا چہرے پہ نہ تشویش ذرا تھی

ہر ایک ادا مظہرِ تسلیم و رضا تھی

ہر ایک نگہ شاہدِ اقرارِ وفا تھی

ہر جنبشِ لب منکرِ دستورِ جفا تھی

پہلے تو بہت پیار سے ہر فرد کو دیکھا

پھر نام خدا کا لیا اور یوں ہوئے گویا

الحمد قریب آیا غمِ عشق کا ساحل

الحمد کہ اب صبحِ شہادت ہوئی نازل

بازی ہے بہت سخت میانِ حق و باطل

وہ ظلم میں‌کامل ہیں تو ہم صبر میں ‌کامل

بازی ہوئی انجام، مبارک ہو عزیزو

باطل ہُوا ناکام، مبارک ہو عزیزو

پھر صبح کی لَو آئی رخِ پاک پہ چمکی

اور ایک کرن مقتلِ خونناک پہ چمکی

نیزے کی انی تھی خس و خاشاک پہ چمکی

شمشیر برہنہ تھی کہ افلاک پہ چمکی

دم بھر کے لیے آئینہ رُو ہو گیا صحرا

خورشید جو ابھرا تو لہو ہو گیا صحرا

پر باندھے ہوئے حملے کو آئی صفِ‌ اعدا

تھا سامنے اِک بندۂ حق یکّہ و تنہا

ہر چند کہ ہر اک تھا اُدھر خون کا پیاسا

یہ رُعب کا عالم کہ کوئی پہل نہ کرتا

کی آنے میں ‌تاخیر جو لیلائے قضا نے

خطبہ کیا ارشاد امامِ شہداء نے

فرمایا کہ کیوں در پئے ‌آزار ہو لوگو

حق والوں ‌سے کیوں ‌برسرِ پیکار ہو لوگو

واللہ کہ مجرم ہو، گنہگار ہو لوگو

معلوم ہے کچھ کس کے طرفدار ہو لوگو

کیوں ‌آپ کے آقاؤں‌ میں ‌اور ہم میں ‌ٹھنی ہے

معلوم ہے کس واسطے اس جاں پہ بنی ہے

سَطوت نہ حکومت نہ حشم چاہیئے ہم کو

اورنگ نہ افسر، نہ عَلم چاہیئے ہم کو

زر چاہیئے، نے مال و دِرم چاہیئے ہم کو

جو چیز بھی فانی ہے وہ کم چاہیئے ہم کو

سرداری کی خواہش ہے نہ شاہی کی ہوس ہے

اِک حرفِ یقیں، دولتِ ایماں‌ ہمیں‌ بس ہے

طالب ہیں ‌اگر ہم تو فقط حق کے طلبگار

باطل کے مقابل میں‌ صداقت کے پرستار

انصاف کے، نیکی کے، مروّت کے طرفدار

ظالم کے مخالف ہیں‌ تو بیکس کے مددگار

جو ظلم پہ لعنت نہ کرے، آپ لعیں ہے

جو جبر کا منکر نہیں ‌وہ منکرِ‌ دیں ‌ہے

تا حشر زمانہ تمہیں مکّار کہے گا

تم عہد شکن ہو، تمہیں غدّار کہے گا

جو صاحبِ دل ہے، ہمیں ‌ابرار کہے گا

جو بندۂ‌ حُر ہے، ہمیں‌ احرار کہے گا

نام اونچا زمانے میں ‌ہر انداز رہے گا

نیزے پہ بھی سر اپنا سرافراز رہے گا

کر ختم سخن محوِ‌ دعا ہو گئے شبّیر

پھر نعرہ زناں محوِ وغا ہو گئے شبیر

قربانِ رہِ صدق و صفا ہو گئے شبیر

خیموں میں‌ تھا کہرام، جُدا ہو گئے شبیر

مرکب پہ تنِ پاک تھا اور خاک پہ سر تھا

اِس خاک تلے جنّتِ ‌فردوس کا در تھا

(مجموعہ ۔ "شامِ شہرِ یاراں")

Link to comment
Share on other sites

  • 10 months later...
  • Basic Members

Dear brothers and sisters,

 

Can anyone please help me i need a nouha

 

Pardes ma marnay ki karti hai dua zanib

Kyu ki na rahe logo abh sar ridha zanib.....

 

Gabrov na tum Gazi zindha hai Ali zaadi dey sakti hai llashu par tanhaa pehray Zanib..

 

Any one who has this nouha please can you send it to me or share

its a request i am looking for this nouha from last 4 year please share it if you have this nouha.

 

My email is waseemmusadiq@yahoo.in

 

 

Link to comment
Share on other sites

  • 3 weeks later...
  • 1 year later...
  • 4 months later...
  • Basic Members

I need old Noha writeups recited by Master Ghulam Abbas:
1) Kya khoob majra hae kahani Hussain ki
    Bewaqt kya miti hae nishani Hussain ki
    Akbar ka tha shabab jawani Hussain ki
    Akbar jawan thae jis se guzarne ke din nah thae
    Ae dashte Karbala abhi marne ke din nah thae.
2) Dastoor hae marta hae pidar agae pisar kae...
3) Dunya walon ko dikhana tha jo maanga paani
     Chahte Shah to hojati yeh dunya paani
4) Ghame Shabbir peh paban-di lagate kuen ho

Link to comment
Share on other sites

  • 1 month later...
  • Advanced Member

Salaam,

This noha is by Mir Hassan Mir 

http://www.nohayonline.com/ZahraKiBetiyon.html 

zahra ki betiyon ki ridayein utar gayi
sajjad ko zaeef sadayein ye kar gayi
(zahra ki betiyon ki ridayein utar gayi)x2

laashon ko rassiyon may jakad kar liye phiro
saydaniya to ghar se nikalte hi mar gayi
zahra ki betiyon...

jaati thi jo kabhi kabhi zahra ki qabr par
jaane khuda hujoom se kaise guzar gayi
zehra ki betiyon...

zulmo sitam ki tez hawayein thi jab chali
sab gulshane batool ki kaliyan bikhar gayi
zehra ki betiyon...

godhon se raahe shaam may gir gir ke mar gaye
bachon ke laashe dekh ke maayein bhi mar gayi
zehra ki betiyon...

ramla ye poochti thi sakina se qaid may
zakhmi hai kaan baaliyan bibi kidhar gayi
zehra ki betiyon...

bazaar leke jao na be-parda zaalimo
mar jayegi hussain ki behne agar gayi
zehra ki betiyon...

Link to comment
Share on other sites

  • 11 months later...
  • 7 months later...
  • 1 month later...

Join the conversation

You are posting as a guest. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

×
×
  • Create New...