Jump to content
Guests can now reply in ALL forum topics (No registration required!) ×
Guests can now reply in ALL forum topics (No registration required!)
In the Name of God بسم الله

Alamaat zahuur imam AS aur shaam(Syria) ke halaatعلامات ظہور


hossain12

Recommended Posts

  • Advanced Member

سفیانی اور شام کے حالات ۱۔
علامہ علی کورانی(اردو ترجمہ ابوفواد)
جوں ہی شام میں حالات بگڑنے لگے مجھ سے لوگوں نے رابطے شروع کردیے اور متعدد قسم کے سوالات پوچھنے لگے لیکن سوالات کا پوچھاڑ اس وقت شروع ہوا جب شام کے شہر درعا میں حالات بگڑے یعنی تکفیریوں نے قتل عام شروع کردیا کیونکہ میری کتاب عصر ظہور میں بیان ہوا ہے کہ سفیانی کا خروج شام کے درعا شہر سے ہوگا
اور یہ بات صحیح ہے لیکن سفیانی کے خروج سے پہلے وہاں بہت سے واقعات رونما ہونگے اور کچھ خاص قسم کی صورتحال کا سامنا ہوگا
اسی طرح یمن اور موجودہ حالات کے بارے میں بھی ایساہی ہے
ہم مکمل یقین کے ساتھ کسی وقت کا تعین نہیں کرسکتے لیکن ہم یہ ضرور کہہ سکتے ہیں کہ موجودہ حالات بالکل امام کے ظہور کی جانب دلالت کرتے ہیں اب کس قدر وقت لگے گا بس اس کا علم صرف اللہ کے پاس ہے دو تین پانچ یا دس سال کچھ نہیں کہا جاسکتا
شام میں اس وقت الاصھب کی حکمرانی ہوگی اب اصھب کون ہے یہ ایک الگ بحث ہے شام کے دمشق شہر میں ایک ذلزلہ رونما ہوگا جس میں ایک لاکھ کے قریب لوگ مارے جاینگے اور یہ ایک لاکھ افراد مومنین میں سے ہوں یہ ممکن نہیں اسی طرح حرستا شہر میں کچھ واقعات ہونگے اور پھر اس کے بعد سفیانی اپنی مومنٹ شروع کرے گا پس جبتک یہ زلزلہ رونما نہیں ہوتا کچھ نہیں کہا جاسکتا لیکن یہ کہہ سکتے ہیں کہ جوکچھ اس وقت ہورہا ہے وہ سفیانی ہی سے جڑے واقعات ہیں
واضح احادیث بیان کرتیں ہیں کہ اس زلزلے کے بعد الاصھب جو کہ حکمران ہوگا اس کے خلاف ابقع اٹھ کھڑا ہوگا ان کی باہم جنگ کچھ عرصہ چلتی رہے گی یہاں تک اس کا کوئی نتیجہ برآمد نہیں ہوگا یہاں تک کہ سفیانی درعا سے مومنٹ شروع کرے گا اور ان دونوں کے ساتھ جبگ کرے گا یہ اس مشہور روایت کی تفسیر ہے جس میں کہا گیا ہے کہ ’’شام تین جھنڈوں تلے تقسیم ہوگا ‘‘اور اس روایت کو شیعہ اور سنی دونوں بیان کرتے ہیں سفیانی دیگر ممالک سے امن فوج طلب کرے گا جیسے عرب ممالک اس وقت حجاز(سعودیہ)میں سیاسی عدم استحکام ہوگا
حجاز میں سیاسی عدم استحکام اور قبائلی ٹکراو ایک حتمی امر ہے اور اسے ہونا ضروری ہے اور سفیانی لشکر میں حجاز کے ناصبیوں کا کنٹرول ہوگا میراخیال ہے کہ سعودی نظام کے گرنے کے ساتھ وھابیوں کی ایک تعداد یورپ فرار ہوگی اور باقی تعداد شام کا رخ کرے گی
یمن میں اس وقت ایک مرکزی مضبوط حکومت ہوگی جسے یمانی جیسی مضبوط شخصیت چلارہی ہوگی یہ بھی ضروری نہیں کہ وہ شیعہ مذہب سے تعلق رکھتا ہو لیکن وہ امام کے خاص اصحاب میں سے ہوگا

 سفیانی کی مومنٹ شروع ہوتے ہیں امام کے ظہور کا آغاز ہوگا اور امام ع اس وقت ایران عراق سمیت متعدد ممالک میں موجود اپنے چاہنے والوں سے رابطے کرینگے اور اپنی عظیم تحریک کے آغاز کا بتاینگے اور انہیں عصر ظہور کے لئے آمادہ باش ہونے کو کہے گے یمانی امام کی تحریک کا ایک اہم رکن ہوگا یہاں تک کہ وہ امام کا ترجمان کہلائے گا اس کی اطاعت واجب ہوگی اور یہ  بھی مومنین کا ایک امتحان ہے کہ وہ امام کی موجودگی میں یمانی کی بات مان لیں اور اطاعت کریں ممکن ہے کہ لوگ یہ کہنے لگیں کہ ہم اس یمنی حکمران کو جو بظاہر کوئی خصوصیت نہیں رکھتا کہ اطاعت کریں اور وہ امام کا خاص کہلائے یہاں تک کہ یمانی کے ہاتھوں کرامات ظاہر ہونے شروع ہونگی کیونکہ وہ صاحب اسم اعظم ہوگا ممکن ہے کہ وہ کہہ اب ولایت فقیہ کا دور ختم ہوا اب براہ راست میری اطاعت کرو وہ کہہ دے کہ حوزہ میں موجود فقہی کتاب بند کردو اور اس کتاب کو پڑھادو تمام علمی رسائل و فقہی مسائل میں میری جانب رجوع کرو اور یہ چیز شیعہ زہنیت کے لئے ایک کڑا امتحان رکھتی ہے کہ وہ اپنی زہنیت کو بدلیں
یمانی حجاز کے سیاسی عدم استحکام کا فائدہ اٹھاتے ہوئے مکہ و مدینہ میں داخل ہوگا اور اسے آزاد کرائے گا تاکہ امام ع اسے اپنا مرکز بنالیں

Link to comment
Share on other sites

  • Advanced Member

 Sufyani aur shaam ke halaat? (Roman urdu ).
allama Ali Korani ( urdu translation Abu Fawad )
jon hi shaam mein halaat bighrnay lagey mujh se logon ne raabtey shuru kardiye aur mutadid qisam ke sawalaat poochnay lagey lekin sawalaat ka selaab is waqt shuru howa jab shaam ke shehar Daraa mein halaat bigre yani Takfirion ne qatal aam shuru kardiya kyunkay meri kitaab asar zahuur mein bayan howa hai ke Sufyani ka Kharooj shaam ke Draa shehar se hoga
aur yeh baat sahih hai lekin Sufyani ke Kharooj se pehlay wahan bohat se waqeat runuma hunge aur kuch khaas qisam ki sorat e haal ka saamna hoga
isi terhan Yemen aur mojooda halaat ke baray mein bhi aysahi hai
hum mukammal yaqeen ke sath kisi waqt ka taayun nahi kar saktay lekin hum yeh zaroor keh satke hain ke mojooda halaat bilkul imam ke zahuur ki janib Dalalat karte hain ab kis qader waqt lagey ga bas is ka ilm sirf Allah ke paas hai do teen paanch ya das saal kuch nahi kaha ja sakta
shaam mein is waqt Ashab ki hukmarani hogi ab Ashab kon hai yeh aik allag behas hai shaam ke Dimashq shehar mein aik zilzila runuma hoga jis mein aik laakh ke qareeb log maaray jaingey aur yeh aik laakh afraad momnin mein se hon yeh mumkin nahi isi terhan Harasta shehar mein kuch waqeat hunge aur phir is ke baad Sufyani apni moment shuru kere ga pas jbtk yeh zalzala runuma nahi hota kuch nahi kaha ja sakta lekin yeh keh satke hain ke jokchh is waqt ho raha hai woh Sufyani hi se jurey waqeat hain
wazeh ahadees bayan kartin hain ke is zalzalay ke baad Ashab jo ke hukmaran hoga is ke khilaaf Abqa uth khara hoga un ki baahum jung kuch arsa chalti rahay gi yahan taq is ka koi nateeja bar aamad nahi hoga yahan taq ke Sufyani Draa se moment shuru kere ga aur un dono ke sath jang kere ga yeh is mashhoor rivayet ki Tafseer hai jis mein kaha gaya hai ke' ' shaam teen jhndon taley taqseem hoga' ' aur is rivayet ko Shiah aur suni dono bayan karte hain Sufyani deegar mumalik se aman fouj talab kere ga jaisay arab mumalik is waqt Hijaz ( saudia ) mein siyasi Adam istehkaam hoga
Hijaz mein siyasi Adam istehkaam aur qabaili tkrav aik hatmi amar hai aur usay hona zurori hai aur Sufyani lashkar mein Hijaz ke Nasbion ka control hoga mirakhyal hai ke Saudi nizaam ke girnay ke sath Wahabionں ki aik tadaad Europe faraar hogi aur baqi tadaad shaam ka rukh kere gi
Yemen mein is waqt aik markazi mazboot hukoomat hogi jisay yamani jaisi mazboot shakhsiyat chala rahi hogi yeh bhi zurori nahi ke woh Shiah mazhab se talluq rakhta ho lekin woh imam ke khaas ashaab mein se hoga

Sufyani ki moment shuru hotay hain imam ke zahuur ka aaghaz hoga aur imam ain is waqt Iran Iraq sameit mutadid mumalik mein mojood apne chahanay walon se raabtey karaingay aur apni azeem tehreek ke aaghaz ka elaan aur inhen asar zahuur ke liye amaada baash honay ko kahe ge yamani imam ki tehreek ka aik ahem rukan hoga yahan taq ke woh imam ka tarjuman kehlaye ga is ki itaat wajib hogi aur yeh bhi momnin ka aik imthehaan hai ke woh imam ki mojoodgi mein yamani ki baat maan len aur itaat karen mumkin hai ke log yeh kehnay lagen ke hum is yemeni hukmaran ko jo bzahir koi khasusiyat nahi rakhta ke itaat karen aur woh imam ka khaas kehlaye yahan taq ke yamani ke hathon karamaat zahir honay shuru hongi kyunkay woh sahib ism Azam hoga mumkin hai ke woh keh ab Wilayat fiqiya ka daur khatam howa ab barah e raast meri itaat karo woh keh day ke hozh mein mojood fqhi kitaab band kardo aur is kitaab ko pharha do tamam Ilmi rasail o fqhi masail mein meri janib rujoo karo aur yeh cheez Shiah zehniyat ke liye aik kara imthehaan rakhti hai ke woh apni zehniyat ko badleen
yamani Hijaz ke siyasi Adam istehkaam ka faida uthatay hue mecca o madinah mein daakhil hoga aur usay azad karaye ga taakay imam ain usay apna markaz banalen

 

Link to comment
Share on other sites

  • Advanced Member

اسلام علیکم

بعض چیزیں ہوتی ہیں جن پر شرم نہیں فخر کرنا چاہیئے۔۔۔

مثلاً فخر کرنا چاہیئے کہ ہمارے پاس بہترین اور باتقوی ترین مراجع و مجتھدین کرام موجود ہیں، اور اس سے بڑھ کر فخر کرنا چاہیئے کہ ہمارے پاس نظام ولایت فقیھ موجود ہے۔۔۔۔ فخر کرنا چاہیئے کہ اسلامی انقلاب جو ایران میں واقع ہوا یہ دنیا بھر کے تشیع کی طاقت کا  سرچشمہ ہے۔۔۔۔ ہم فخریہ طور پر دنیا کے سامنے اپنا نظام مرجعیت اور نظام ولایت فقیھ پیش کرسکتے ہیں۔۔۔۔

اور ہمارے لئے باعث فخر ہے کہ اس اسلامی انقلاب کی قیادت باتقوی اور بابصیرت رھبر کے ہاتھوں میں ہے۔۔۔  وہ  رھبر جنھوں نے تیس سالوں میں ناقابل تحمل بحرانوں کا دلیری سے سامنہ کیا۔۔ اور آج بھی ساری استعماری طاقتوں کے سامنے سینہ سپر ہیں۔۔۔

***********************

ان جیسی مقدس اور باتقوی شخصیات کے لئے یہ سوال اٹھانا کہ جب امام زمان (عج) پردہ غیبت سے جلوہ افروز ہونگےتب آیا یہ شخصیات اپنے منصب کو امام کے حوالے کریں گی یا نہیں؟

یا یہ کہ عوام ان کے استعفیٰ کو قبول کرے گی یا نہیں

ایسے شکوک و شبھات اٹھانے کا کم سے کم نقصان یہ ہے کہ ایک عام فھم آدمی مرجعیت اور رہبریت کو مشکوک نگاھوں سے دیکھنا شروع کردے گا۔۔۔۔ 

مرجعیت اور رہبریت جب قرآن و حدیث سے ثابت ہے اور یہ خود امام کے حکم کی بجاآوری ہے پھر ہم کس چیز سے خوفزدہ ہوں؟

اب جب کے اعتراض اٹھایا گیا ہے تو بہتر ہے جواب خود آیت اللہ سید علی خامنہ ای سے سنا جائے ۔۔۔۔

https://www.shiatv.net/video/b462f3ad750d65d42a3a

کچھ سال قبل جب دشمن نے اس اسلامی انقلاب پر کمر توڑ حملہ کیا اور ایرانی صدارتی انتخابات میں دھاندلی کا پروپیگنڈہ کیا اور رھبر کے خلاف تہمتیں لگائیں تاکہ عوام کو اس اسلامی نظام حکومت سے بدظن کیا جائے تب رہبر میدان میں آئے اور اسی خطبے کی ایک مختصر کلپ یہ ہے۔۔ اس حساس موقع پر امام زمانہ کو مخاطب کیا اور کہا۔۔۔۔

اردو ترجمہ کچھ اس طرح بنتا ہے۔۔۔۔
 

Quote

اے ہمارے سید و سردار، ہم وہی انجام دے رہے ہیں جو ہمارا وظیفہ ہے اور وہی کہتے  ہیں جو کہنے کا حق بنتا ہے اور وہی کہتے رہیں گے۔۔ میرے پاس حقیر سی جان ہے، میرا جسم بھی ناقص ہے، تھوڑی سی آبرو ہے جو آپ ہی کی دی ہوئی ہے ان سب کو ہاتھ کی ھتیلی پر رکھ کر لے آیا ہوں تاکہ اس انقلاب اور اسلام کی راہ میں فدا کردوں۔۔۔۔۔ یہ سب آپ پر نثار ہے۔۔

ہمارے مولا، ہمارے لئے دعا کیجئے، ہمارے سرپرست آپ ہیں اس ملک کے سرپرست آپ ہیں، اس انقلاب کے سرپرست بھی آپ ہیں، ہمارا سہارا آپ ہیں، ہم اس راہ کو پوری قدرت و توانائی سے جاری رکھیں گے۔۔۔ اے مولا اس راہ میں دعائوں اور عنایت کے ذریعے ہماری مدد فرمائیے۔۔۔

 

Edited by talib e ilm
Link to comment
Share on other sites

  • Advanced Member

وعلیکم السلام ورحمۃ اللہ

مجھے نہیں معلوم کہ آپ نے تحریرکے کس حصے میں ایسی چیز دیکھی جو مرجعیت والا مقام اور ولایت عظمای فقیہ کے خلاف ہیں

یہ تحریر علامہ علی کورانی لبنان کے عالم دین کہ جو اس موضوع پر مکمل عبور رکھتے ہیں اور ساتھ میں ولایت فقیہ کے سب سے بڑی پیروکار ہونے کے ساتھ ساتھ مدافع بھی ہیں

جو باتیں اپر بیان ہوئیں وہ ایک علمی و ایندہ کے بارے میں معاشرتی ممکنہ صورتحال پر بحث ہے اور اس قسم کی صورتحال سے ماضی میں بھی دنیا تشیع دوچار ہوئی ہے اس لئے آئمہ ع عصر غیبت کے لئے معاشرے کو آمادہ کرتے رہے ہیں تاکہ لوگ کنفیوژن کا شکار نہ ہوں

آخری بات میں بھی حوزہ علمیہ قم سے فارغ تحصیل ہوں اور علاہمہ علی کورانی میرے استاد محترم رہے ہیں

Link to comment
Share on other sites

  • Advanced Member

ہمارے لئے باعث فخر ہے کہ آپ جیسے فاضل علمائے کرام اس فورم کی زینت ہیں اور اپنے قیمتی لمحات میں سے یہاں بھی وقت دیتے ہیں۔۔

آپ سے استفادہ کا سلسلہ انشاء اللہ جاری رہے گا۔۔۔ ہم تہہ دل سے آپ کے ممنون و مشکور ہیں،۔۔

آپ کے استاد گرامی یقیناً قابل احترام شخصیت کے مالک ہیں اور کسی تعارف کے محتاج نہیں ہیں۔۔اور ظاھراً اس مقالے سے متعلق اپنے خدشات آپ کو خصوصی پیغام کے ذریعے ارسال کررہا ہوں ۔۔

اور شرمندہ ہوں کے بندے نے فارغ التحصیل کے سامنے جسارت کی۔۔۔

آخر میں آپ سے دست بستہ گذارش ہے کہ معاشرتی مسائل پر خوبصورت مقالات کا یہ سلسلہ جاری رکھئے۔۔۔

شکریہ

Link to comment
Share on other sites

  • Advanced Member

شکریہ بردار محترم مولا آپ کو سلامت رکھے

ہم اس نکتے کو نہ بھولیں کہ ہماری گفتگو کا محور عصر ظہور امام ہے جہاں ظاہر ہے کہ بہت ساری تبدیلیاں رونما ہونگیں اور ایسی تبدیلیوں کے لئے

عام انسان فوری طور پر تیار نہیں ہوجاتا یہ ہمیشہ سے انسانی نفسیات کاحصہ رہا ہے جب تک چیز کو مکمل نہ سمجھ پائے اس سے دور ہوجاتا ہے یا اس کے قرییب نہیں جاتا مولا کا فرمان ہے کہ الناس اعداما جھلو یعنی لوگ اس چیز کے مخالف بنتے ہیں جس کے بارے لاعلم ہوتے ہیں

اور یہ ایک قدررتی امر ہے

خداوند آپ کو ہمیشہ سلامت رکھے اور آپ کی اس معرفت اور احساس ذمہ داری کو اسی طرح قائم رکھے ماشااللہ انتہائی باریک نکات پر توجہ رکھے ہیں آپ

Link to comment
Share on other sites

Join the conversation

You are posting as a guest. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

×
×
  • Create New...