Jump to content
Guests can now reply in ALL forum topics (No registration required!) ×
Guests can now reply in ALL forum topics (No registration required!)
In the Name of God بسم الله
Sign in to follow this  
Syedazhar

Karbala Aur Imam Hussain A.s

Recommended Posts

Salam. (Talib e Ilm)

Ap se mujhay seeknai ko bahut kuch milega plz rabta may rehna aur mari rehnomai kertay rehna..

Mola Hussain a.s app shadabad rekain

kiun us chashmay se sairaab nahi hotay jis se may b sairab ho raha ho..

www.islamimarkaz.com

Share this post


Link to post
Share on other sites

عبدالحمید عدم

تھا کربلا کو ازل سے جو انتظارِ حُسین

وہیں تمام ہوئے جملہ کاروبارِ حسین

دکانِ صدق نہ کھولو، اگر نہیں توفیق

کہ جاں چھڑک کے نکھرتا ہے کاروبارِ حسین

وہ ہر قیاس سے بالا، وہ ہر گماں سے بلند

درست ہی نہیں اندازۂ شمارِ حسین

کئی طریقے ہیں یزداں سے بات کرنے کے

نزولِ آیتِ تازہ ہے یادگارِ حسین

وفا سرشت بہتّر نفوس کی ٹولی

گئی تھی جوڑنے تاریخِ زر نگارِ حسین

فارغ بخاری

حُسین نوعِ بشر کی ہے آبرو تجھ سے

حدیثِ حرمتِ انساں ہے سرخرو تجھ سے

ملایا خاک میں تُو نے ستمگروں کا غرور

یزیدیت کے ارادے ہوئے لہو تجھ سے

بہت بلند ہے تیری جراحتوں کا مقام

صداقتوں کے چمن میں ہے رنگ و بُو تجھ سے

ترے لہو کا یہ ادنیٰ سا اک کرشمہ ہے

ہوئی ہے عام شہادت کی آرزو تجھ سے

کبھی نہ جبر کی قوت سے دب سکا فارغ

ملی ہے ورثے میں یہ سر کشی کی خُو تجھ سے

Share this post


Link to post
Share on other sites

اوہام کو ہر اک قدم پہ ٹھکراتے ہیں

ادیان سے ہر گام پہ ٹکراتے ہیں

لیکن جس وقت کوئی کہتا ہے حسین

ہم اہلِ خرابات بھی جھک جاتے ہیں

سینے پہ مرے نقشِ قدم کس کا ہے

رندی میں یہ اجلال و حشم کس کا ہے

زاہد، مرے اس ہاتھ کے ساغر کو نہ دیکھ

یہ دیکھ کہ اس سر پر علم کس کا ہے

Share this post


Link to post
Share on other sites

زندہ اسلام کو کیا تُو نے

حق و باطل کو دکھا دیا تُو نے

جی کے مرنا تو سب کو آتا ہے

مر کے جینا سکھا دیا تُو نے

Share this post


Link to post
Share on other sites

غلام محمد قاصر

جو پیاس وسعت میں بے کراں ہے سلام اس پر

فرات جس کی طرف رواں ہے سلام اس پر

سبھی کنارے اسی کی جانب کریں اشارے

جو کشتیِ حق کا بادباں ہے سلام اس پر

جو پھول تیغِ اصول سے ہر خزاں کو کاٹیں

وہ ایسے پھولوں کا پاسباں ہے سلام اس پر

مری زمینوں کو اب نہیں خوفِ بے ردائی

جو ان زمینوں کا آسماں ہے سلام اس پر

ہر اک غلامی ہے آدمیّت کی نا تمامی

وہ حریّت کا مزاج داں ہے سلام اس پر

حیات بن کر فنا کے تیروں میں ضو فشاں ہے

جو سب ضمیروں میں ضو فشاں ہے سلام اس پر

کبھی چراغِ حرم کبھی صبح کا ستارہ

وہ رات میں دن کا ترجماں ہے سلام اس پر

میں جلتے جسموں نئے طلسموں میں گِھر چکا ہوں

وہ ابرِ رحمت ہے سائباں ہے سلام اس پر

شفق میں جھلکے کہ گردنِ اہلِ حق سے چھلکے

لہو تمھارا جہاں جہاں ہے سلام اس پر

Share this post


Link to post
Share on other sites

Mai sab say poochta hoon,Aaj Tak Jitni bhi jangaiy huwi hai udhar bhi namazein huwi Magar kabhi zikr nahi huwa kay kidhar namaz parhi gai,Yeh Allah ki Qudrat tow dekho 1400 yrs guzar gaye hain magar logon ko aaj bhi woh Sajda yaad hai jo fauj say Ghira huwa Gardan Pay khanjar Aur Sar Sajde mein

Share this post


Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You are posting as a guest. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Sign in to follow this  

×
×
  • Create New...