Jump to content
Guests can now reply in ALL forum topics (No registration required!) ×
Guests can now reply in ALL forum topics (No registration required!)
In the Name of God بسم الله
Sign in to follow this  
Syedazhar

Karbala Aur Imam Hussain A.s

Recommended Posts

Hasnain Ke Sar par se Utha saya-e-

Madar, aey vaye Musibat,

Shehzaadi-e-Konain gayin Janib-e-

Kousar, aey vaye Musibat.

Jo mujh pe masa'ib pade gar din pe

wo padte,to shab mai badalte,

Masooma-e-aalam Ye bayaan karti

theein aksar,aey vaye Musibat.

Aur zulm-o-sitam itne pahadon pe jo

padte, ho jatey wo tukde,

Farmaya jab ye zulm huye had se guzar

kar, aey vaye Musibat.

Ya raton ko roya karen, ya royen wo

din ko, samjhaiye inko,

Haider se kaha ahle Madina ne yeh

aakar, aey vaye Musibat.

531166_413407825344003_261512273866893_1542244_1348138588_n.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites

Tu Dushman e Sarkar e Zaman (A.S)

Hai Toa Mujhay Kya

Tu Zar Ki Haweli Mein Dafan Hai Toa

Mujhay Kya

Parti Hai Zanjeer Toa Meray Hi Jism Pe

Hoti Teri Kamar Pe Dukhan Hai Toa

Mujhay Kya

Hum Ne Toa Basaya Hai Yeh Dil Karb o

Bala Mein

Tera To Saqifa Watan Hai To Mujhay

Kya

525659_423208937697225_261512273866893_1563297_1769486816_n.jpg

Share this post


Link to post
Share on other sites

Salam Ya Hussain (a.s)

Karbala ka munzar socha kar humain aur koch samj main ata hai ya nahi lekin yee zaroor hai ke Aik chotay se Veranay se jaman leenay wali Tahrik aj agar sari Dunya mai Ya Hussain Ya Hussain kar reha hai tu iss mai zaroor aisa koch hai jo Hikmath se khali ho...

Share this post


Link to post
Share on other sites

Imam Hussain a.s ka Qayam ka maqsad samjnay ke zaroorat hai agar ba'yat ka sawal na hota tu Imam a.s kabi madina na chortay Imam Hassan a.s k samnay ba'yat ka sawal nahi tha waha sirf Khilafat ki bath thi. khilafat se na Moula Ali a.s nay pyaar kia aur na Hasnain a.s nay. Yazeed mal'oon nadaan tha jo yee Taqaza ker baita.

Doseri bari bath yee hai ke Imam Hussain a.s nay Mecca mai 4 Mahinai qiyam kia sirf iss laye ke logon ko waqt dain sochnay aur samjnay ke layee ke mai (Imam Hussain a.s) kis waja se ghar baar chor ker safar ker reha hon. Lekin afsoos koi bhi na samj saka.........

Share this post


Link to post
Share on other sites

Salam. (Talib e Ilm)

Ap se mujhay seeknai ko bahut kuch milega plz rabta may rehna aur mari rehnomai kertay rehna..

Mola Hussain a.s app shadabad rekain

kiun us chashmay se sairaab nahi hotay jis se may b sairab ho raha ho..

www.islamimarkaz.com

Share this post


Link to post
Share on other sites

عبدالحمید عدم

تھا کربلا کو ازل سے جو انتظارِ حُسین

وہیں تمام ہوئے جملہ کاروبارِ حسین

دکانِ صدق نہ کھولو، اگر نہیں توفیق

کہ جاں چھڑک کے نکھرتا ہے کاروبارِ حسین

وہ ہر قیاس سے بالا، وہ ہر گماں سے بلند

درست ہی نہیں اندازۂ شمارِ حسین

کئی طریقے ہیں یزداں سے بات کرنے کے

نزولِ آیتِ تازہ ہے یادگارِ حسین

وفا سرشت بہتّر نفوس کی ٹولی

گئی تھی جوڑنے تاریخِ زر نگارِ حسین

فارغ بخاری

حُسین نوعِ بشر کی ہے آبرو تجھ سے

حدیثِ حرمتِ انساں ہے سرخرو تجھ سے

ملایا خاک میں تُو نے ستمگروں کا غرور

یزیدیت کے ارادے ہوئے لہو تجھ سے

بہت بلند ہے تیری جراحتوں کا مقام

صداقتوں کے چمن میں ہے رنگ و بُو تجھ سے

ترے لہو کا یہ ادنیٰ سا اک کرشمہ ہے

ہوئی ہے عام شہادت کی آرزو تجھ سے

کبھی نہ جبر کی قوت سے دب سکا فارغ

ملی ہے ورثے میں یہ سر کشی کی خُو تجھ سے

Share this post


Link to post
Share on other sites

اوہام کو ہر اک قدم پہ ٹھکراتے ہیں

ادیان سے ہر گام پہ ٹکراتے ہیں

لیکن جس وقت کوئی کہتا ہے حسین

ہم اہلِ خرابات بھی جھک جاتے ہیں

سینے پہ مرے نقشِ قدم کس کا ہے

رندی میں یہ اجلال و حشم کس کا ہے

زاہد، مرے اس ہاتھ کے ساغر کو نہ دیکھ

یہ دیکھ کہ اس سر پر علم کس کا ہے

Share this post


Link to post
Share on other sites

زندہ اسلام کو کیا تُو نے

حق و باطل کو دکھا دیا تُو نے

جی کے مرنا تو سب کو آتا ہے

مر کے جینا سکھا دیا تُو نے

Share this post


Link to post
Share on other sites

غلام محمد قاصر

جو پیاس وسعت میں بے کراں ہے سلام اس پر

فرات جس کی طرف رواں ہے سلام اس پر

سبھی کنارے اسی کی جانب کریں اشارے

جو کشتیِ حق کا بادباں ہے سلام اس پر

جو پھول تیغِ اصول سے ہر خزاں کو کاٹیں

وہ ایسے پھولوں کا پاسباں ہے سلام اس پر

مری زمینوں کو اب نہیں خوفِ بے ردائی

جو ان زمینوں کا آسماں ہے سلام اس پر

ہر اک غلامی ہے آدمیّت کی نا تمامی

وہ حریّت کا مزاج داں ہے سلام اس پر

حیات بن کر فنا کے تیروں میں ضو فشاں ہے

جو سب ضمیروں میں ضو فشاں ہے سلام اس پر

کبھی چراغِ حرم کبھی صبح کا ستارہ

وہ رات میں دن کا ترجماں ہے سلام اس پر

میں جلتے جسموں نئے طلسموں میں گِھر چکا ہوں

وہ ابرِ رحمت ہے سائباں ہے سلام اس پر

شفق میں جھلکے کہ گردنِ اہلِ حق سے چھلکے

لہو تمھارا جہاں جہاں ہے سلام اس پر

Share this post


Link to post
Share on other sites

Mai sab say poochta hoon,Aaj Tak Jitni bhi jangaiy huwi hai udhar bhi namazein huwi Magar kabhi zikr nahi huwa kay kidhar namaz parhi gai,Yeh Allah ki Qudrat tow dekho 1400 yrs guzar gaye hain magar logon ko aaj bhi woh Sajda yaad hai jo fauj say Ghira huwa Gardan Pay khanjar Aur Sar Sajde mein

Share this post


Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You are posting as a guest. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Sign in to follow this  

×
×
  • Create New...