Jump to content
Guests can now reply in ALL forum topics (No registration required!) ×
Guests can now reply in ALL forum topics (No registration required!)
In the Name of God بسم الله
Sign in to follow this  
khakay batool

KAABE sey Hussainion ka Safar

Recommended Posts

کعبہ سے حسینیوں کا سفر

کعبہ سے کیا جب کہ سفر قبلہء دیں نے

چھوڑاوہ مکاں دوش ِمحمد کے مکیں نے

پائ نہ اماں راز ِالہی کے امیں نے

عزم ِسفر مرگ کیا گوشہ نشیں نے

درپے تھے عدو سبط ِرسول ِمدنی کے

مہلت نہ ملی حج کی نواسے کو نبی کے

Edited by Haji 2003

Share this post


Link to post
Share on other sites

یاران ِوطن سے بھی چھٹے، گھر سے بھی چھوٹے

بیٹی سے چھوٹے،قبر ِپیمبر سے بھی چھوٹے

کچھ بس نہ چلا،تربت ِشبّر سے بھی چھٹے

اور فاطمہ کے مرقد ِانور سے بھی چھٹے

مضطر کیا بے دینوں نے کعبے میں بھی آکر

راحت نہ ملی شہر میں،نے گھر میں خدا کے

Edited by Haji 2003

Share this post


Link to post
Share on other sites

Haq aqeedat ka ada hoga Muharram mein

Matam-e-Shabbir bapa hoga Muharram mein

Har azadar kay seenay per matam ka nishan

Shah ki ghurbat ka gawah hoga Muharram mein

Meri aankhon ko ata ho ashkon ka khazeena

Bas yehi harf-e-dua hoga Muharram mein

Meri Imran shafaat ka hey zamin Ghazi

Jo paband Karbobala hoga Muharram mein

Share this post


Link to post
Share on other sites

کعبے میں مدینہ سے تھے یہ سوچ کے آے

تھے اہل ِحرم کو بھی اسی واسطہ لائے

اللہ کے گھر میں کوئ شاید نہ ستائے

سو، واں بھی یہ تھا خوف کہ حج کرنے نہ پائے

اللہ نے پیدا کیا کعبے میں علی کو

اور جائے سکونت نہ ملی سبط ِنبی کو

احرام تلک باندھ چکے تھے شہ ِابرار

جو کھل گیا احمد کے نواسے پہ یہ اسرار

ہیں قافلہء حاج کے ہمراہ ستم گار

یا قتل کریں طوف میں، یا کر لیں گرفتار

پایا جو تردّد کا محل سرور ِدیں نے

عمرے سے دیا حج کو بدل سرور ِدیں نے

اعمال میں حج کے تو، یہ ہے حکم خدا کا

پِشّتے کو نہ دو عالم ِاحرام میں ایزا

اللہ کا وہ گھر، یہ محمد کا نواسا

سیّد کے ستانے کو وہاں آئے تھے اعدا

گر کھولتا احرام نہ پیارا وہ نبی کا

کعبے میں گلا کاٹتے فرزند ِنبی کا

مضطر تھے شب ِ ہشتم ِزی الحجہّ کو شبیر

تھا قصدِ مصمم کہ سوئے کوفہ ہوں دلگیر

کرتے تھے کبھی یاس سے رو رو کے یہ تقریر

اب یاں سے کہاں دیکھیئے لے جاتی ہے تقدیر

پھر کر جو وطن جائیں تو جانا نہ ملے گا

اب ہم کو بجز قبر ٹھکانا نہ ملے گا

لعنت بر یزید

Edited by Haji 2003

Share this post


Link to post
Share on other sites

Waqar-e-Deen-e-Khuda hey Husain ka matam

Paygambaron ne kiya hey Husain ka matam

Zamana laakh mukhalif ho ruk nahi sakta

Kay Fatema ki Dua hey Husain ka matam

Yazeed is se bari aur kiya hey teri shikast

Key teray ghar mein bapa hey Husain ka matam

Khuda Rasool Farishtay Imam sab hain wahan

Jahan kaheen bhi bapa hey Husain ka matam

Khabar nahi hey ye fatwa farosh mufti ko

Ali kay ghar se chala hey Husain ka matam

Share this post


Link to post
Share on other sites

تھے سبط ِنبی کوچ کی تدبیر میں اُس رات

کی آکے جو ابن ِحَنَفیَّہ نے ملاقات

بھائ سے بغل گیر ہوئے شاہ ِخوش اوقات

کی عرض محمد نے کہ اے قبلہء حاجات

کوفہ کی طرف جانے میں اندیشہء جاں ہے

مکہ میں مکیں ہوں کہ بزرگوں کا مکاں ہے

حیدر ہیں نہ زہرا نہ حسن ہیں نہ پیمبر

تم چار بزرگوں کی نشانی ہو برادر

حضرت ہی کے رہنے سے مدینہ ہے منوّر

سن سن کے فروغ آپکا جلتے ہیں ستمگر

اس شمع کو بھی گل نہ کریں مجھکو یہ غم ہے

اب پنجتن ِپاک میں حضرت ہی کا دم ہے

حضرت نے کہا ہوتا ہے ناچار روانا

بھاتا ہے کسے اپنا وطن چھوڑ کے جانا

میں بیکس و مظلوم ہوں دشمن ہے زمانا

اب تو ہے مدینہ میں نہ مکہ میں ٹھکانا

حاسد ہے کوئ در پئے آزار ہے کوئ

حامی ہے کوئ اور نہ مدد گار ہے کوئ

کرتا نہ سفر کوئ مجھے گر نہ ستاتا

باہر کبھی روضہ سے محمد کے نہ جاتا

میں کیا کروں بھائ مجھے کچھ بن نھیں پڑتا

مرقد سے بزرگوں کے مقدر ہے چھڑاتا

بے دینوں کو جینا مری منظور نہیں ہے

ہو جاوں یہیں قتل تو کچھ دور نہیں ہے

اس امر کا درپے ہے یزید ِستم ایجاد

باقی رہے دنیا میں محمد کی نہ اولاد

ڈرتا ہوں یہاں قتل کریں گر مجھے جللاد

حرمت حرم ِکعبہ کی ہوجائے گی برباد

کعبہ سے میں نکلوں یہ گوارا مجھے کب ہے

ناچار ہوں دوری کا سبب پاس ِادب ہے

Edited by Haji 2003

Share this post


Link to post
Share on other sites

فرمایا جہاں جاوں کروں قصد جدھر کا

چھوڑے گی اجل ساتھ نہ زہرا کے پسر کا

اب دھیان ہے شبیر کو بچوں کا نہ گھر کا

اب کا یہ سفر مجھ کو وسیلہ ہے ظفر کا

گر کوچ سوئے کوفہ نہ ہوئے گا برادر

پھر کون میری قبر میں سوئے گا برادر

چڑھنے لگے رہار پہ جب سبط ِپیمبر

فریاد سوئے کعبہ یہ کی ہاتھ اُٹھا کر

چھٹتا ہوں ترے گھر سے میں اے خالق ِ اکبر

اس سال ہوا حج بھی نہ خادم کو میسّر

پاس آن کے در سے جو تیرے دور جلا ہوں

تو عالم و دانا ہ کہ مجبور چلا ہوں

Edited by Haji 2003

Share this post


Link to post
Share on other sites

Èÿ ãÑÿ ÀãÑÇÀ ÀیŸ Ñãی ˜Ç ÓÝÑ Àÿ

ÑÓÊÀ Ȫی ÎØÑäǘ Àÿ¡ãäÒá Ȫی À Ȫی Ñ Àÿ

Ñ ÝÖá æ ˜Ñã Ñ ÊیÑÿ¡ ÈäÏÿ ˜ی äÙÑ Àÿ

äÇÇÀ ÕÏÇ ÂÆ¡˜À ˜یÇ Ê̪ ˜æ ÎØÑ Àÿ

ÀÑ ÍÇá ãیŸ ÓÇیÀ¡ÊÑÿ ÓÑ Ñ Àÿ ÀãÇÑÇ

Àã ÇÓ ÀیŸ ÊیÑÿ¡ÊÑÇ Ïá ªÑ Àÿ ÀãÇÑÇ

ªÑ ªæš ˜ÿ Ìäá ˜æ áÇ ÔÀÑ ˜Ç æÇáی

ÈØÍÇ ÀæÇ ÈÑÈÇÏ¡ãÏیäÀ ÀæÇ ÎÇáی

滂 ÓÇیÀÁÍÞ¡ÓÇیÀÁ ÔÇÀäÔÀ öÚÇáی

ÔیÚæŸ À ÊÈÇÀی ÓÊã ÇیÌÇÏ äÿ Çáی

ÇáÝÊ ÀãیŸ ÊیÑی Àÿ¡Ê̪ÿ ÇÀ ÀãÇÑی

یÀ ªÑ Àÿ ÀãÇÑÇ¡ Êæ æÀ Àÿ ÑÇÀ ÀãÇÑی

ᘪی Àÿ ÒÑÇÑÀ Èäööö öÕÇáÍ äÿ ÑæÇیÊ

ǘ Ïã ãیŸ ÀæÆ ÝæÌ öãáǘ ˜ی یÀ ˜ËÑÊ

ÌõÒ ÍÞ äÀ ÔãÇÑ Çä ˜Ç ÊªÇãã˜ä ˜Óی ÕæÑÊ

ÇõÓ æÞÊ ÒÑÇÑÀ Óÿ یÀ ˜Àäÿ áÿ ÔÈیÑ

یÇæÑ ãÑÿ Ïی˜ªÿ¿ãÑÿ Ûã ÎæÇÑæŸ ˜æ Ïی˜ªÇ

˜یæŸ ÓیøÏ öÈی˜Ó ˜ÿ ãÏÏ ÇÑæŸ ˜æ Ïی˜ªÇ¿

ªÑ ˜Àäÿ áÿ ÀäÓ ˜ÿ ÒÑÇÑÀ Óÿ یÀ ÓÑÇÑ

ÎÇáÞ ˜ی ÚäÇیÊ Óÿ یÀ ÓÇãÇŸ Àÿ ãیÓøÑ

ÇÀæŸ Êæ ˜ÑæŸ Ìä ãیŸ ÇÓ ÝæÌ Óÿ ÌǘÑ

˜Ó ÒیÓÊ À ÀæŸ ØÇáÈ öÌÚیÊ öáÔ˜Ñ

ÎæÏ Àÿ ã̪ÿ ãäÙæÑ ˜À ÓÑ Êä Óÿ ÌÏÇÀæÇ

ÊÇãÛÝÑÊ öÇõãÊ ö ãÍÈæÈ ö ÎÏÇ ÀæÇ

Share this post


Link to post
Share on other sites

یÀ ˜À ˜ÿ ÒÑÇÀ Óÿ áÿ ÓÑæÑ öÒی ÔÇŸ

Ìæ ÂÆ óÑÇ ÈÇäϪÿ ÀæÆÿ ÝæÌ öÈäی ÌÇŸ

ÓÑÏÇÑ äÿ ˜ی ÚÑÖ ˜À Çÿ Ïیä ˜ÿ ÓáØÇä

Àã ÔیÚÀ ÀیŸ¡ÈÎÔÇ Àÿ Úáی äÿ ÀãیŸ ÇیãÇŸ

Àã  ˜æ ášäÿ ˜ÿ áیÆÿ ÌÇäÿ äÀ ÏیŸ ÿ

ÝÑÒäÏ öیÏ ÇááÀ À Âä Âäÿ äÀ ÏیŸ ÿ

˜Ó Þæã Óÿ ÏÑیÔ Àÿ ÍÖÑÊ ˜æ ášÇÆ¿

ãæáÇ äÿ ÛáÇãæŸ ˜ی äÀ ˜یæŸ ÝæÌ ÈáÇÆ

˜æä ÇیÓÿ ÀیŸ ÓјԿÇäªیŸ ˜ª ÔÑã äÀ ÂÆ

˜ÑÊÿ ÀیŸ ãÍãÏ ˜ÿ äæÇÓÿ Óÿ ášÇÆ

Ìä Çõä Óÿ ˜ÑیŸ ÏیÌیÆÿ ÀãیŸ ͘ã æÛÇ ˜Ç

Ìæ  ˜Ç ÏÔãä Àÿ¡ æÀ ÏÔãä Àÿ ÎÏÇ ˜Ç

ÔÀ äÿ ˜ÀÇ ÔÑã ÂÊی Àÿ ˜یÇ äÇã ÈÊÇÄŸ

æÀ ÇõãÊ öÇÍãÏ ÀیŸ¡ãیŸ ˜یÇ Çõä ˜æ ÓÊÇÄŸ

ÛیÑ Çõä ˜æ Ìæ Óã̪柡Êæ ÈáÇäÿ À äÀ ÌÇÄŸ

ÓÈ ã̪ ˜æ æÇÑÇ À Ìæ ʘáیÝ ÇõŠªÇÄŸ

˜یæŸ ˜Ñ ÇõäªیŸ ÈÑÈÇÏ ˜ÑæŸ ÍÌÊ öÍÞ ÀæŸ

áÇÒã Àÿ ã̪ÿ ÑÍã ˜À ãیŸ ÑÍãÊ ö ÍÞ ÀæŸ

Share this post


Link to post
Share on other sites

ÌäøÇÊ یÀ Óä ˜Ñ Æÿ ˜ÑÊÿ ÀæÆÿ ÒÇÑی

ÇæÑ Âÿ Èšªی ÓÈØ öیãÈÑ ˜ی ÓæÇÑی

یæŸ ÌÇÊÇ ÊªÇ æÀ ÞÇÝáÀÁ ÚÇÔÞ öÈÇÑی

ÌÓ ØÑÍ áÓÊÇŸ Óÿ áÿ ÈÇÏ öÈÀÇÑی

šÊی ʪی یÀ Ñãی ˜À ãÓÇÝÑ Êªÿ ÞáÞ ãیŸ

æÈÿ ÀæÆÿ ʪÿ ÝÇØãÀ ˜ÿ ªæá ÚÑÞ ãیŸ

æÇŸ ÔÀ äÿ ÑÝیÞæŸ ˜æ ÈáÇ ˜Ñ یÀ ÓäÇیÇ

ÈیÚÊ Óÿ ãÑی ˜æÝیæŸ äÿ ÀÇʪ ÇõŠªÇیÇ

ãÓáã ˜Ç Èªی ÓÑ ˜ÇŠ ˜ÿ äیÒÿ À šªÇیÇ

ãیŸ ªÑ ˜ÿ äÀیŸ ÌÇäÿ ˜Ç¡ÂیÇ Êæ ÇÈ ÂیÇ

ÇÈ ÔÈ ˜æ áÇ ÌÇÆÿ æÀ¡ªÑ ÌÇäÇ Àÿ ÌÓ ˜æ

ÇÈ ÓÇʪ æÀی Ïÿ ãÑÇ¡ ãÑ ÌÇäÇ Àÿ ÌÓ ˜æ

یÀ ÓäÊÿ Àی Ñæäÿ áÿ¡ ãÓáã ˜ÿ æÀ ÏáÏÇÑ

ÇÓáÇã ˜ÿ áÔ˜Ñ ãیŸ ÊáÇØã ÀæÇ Ç˜ ÈÇÑ

ÓÑ ˜ªæá ˜ÿ یŠÿ ÍÑã öÇÍãÏ öãÎÊÇÑ

滂 ÔæÑ ˜À ÂÝÊ ãیŸ ªäÓÿ ÓیøÏ öÇÈÑÇÑ

˜æÝÿ ãیŸ ÈáÇ ˜Ñ یÀ ÏÛÇ ˜ÑÊÿ Àی ÇÚÏÇ

ÇÈ Ïی˜ªیŸ äÈی ÒÇÏÿ Óÿ ˜یÇ ˜ÑÊÿ ÀیŸ ÇÚÏÇ

ãÓáã ˜ی ÎÈÑ Óÿ یÀ ÀæÇ ÎæÝ ÏáæŸ Ñ

ª ª ˜ÿ ÇÓی ÔÈ ˜æ ÑæÇäÀ ÀæÆÿ ǘËÑ

یÇ Êªÿ ˜ÀیŸ Îیãÿ¡˜ÀیŸ ÇáیŸ¡ ˜ÀیŸ ÈÓÊÑ

یÇ Êیä ÀÑ ÑÇÊ ãیŸ ÎÇáی ÀæÇ áÔ˜Ñ

ÊÇ ÔÇã Êæ ÓÈ یÇæÑ öÓáØÇä öÒãä ʪÿ

ÙÇÀÑ Ìæ ÀæÆ ÕÈÍ¡ Êæ ÀÝÊÇÏ Ïæ Êä ʪÿ

Share this post


Link to post
Share on other sites

salam,

(wasalam) n

(salam)

ji kun nahen khwahar mir anees k marseye hun aur mir anees ko dua na den momin ye kaise ho sakta hae, magar khuch acha share krne pe aap k leye bhi dua go hen aur shukguzar bhi !

Share this post


Link to post
Share on other sites

salam,

(wasalam) n

(salam)

ji kun nahen khwahar mir anees k marseye hun aur mir anees ko dua na den momin ye kaise ho sakta hae, magar khuch acha share krne pe aap k leye bhi dua go hen aur shukguzar bhi !

salam,

nawazish, shukriya.

Perwerdegar aAp ko hamaisha apni amaan mien rekhey. ameen summa ameen

ws

Share this post


Link to post
Share on other sites

جب واں سے نماز ِسحری پڑھ کے چلے شاہ

مسلم کو حرم روتے چلے جاتے تھے ہمراہ

وارد ہوئے اک دشت ِبلا خیز میں ناگاہ

چلنے سے رکا، واں فرس ِسرور ِزی جاہ

فرمایا،کہ کیا جانیئے یہ کون سی جا ہے

ہاتف نے صدا دی کہ یہی دشت ِبلا ہے

یہ سنتے ہی رہوار سے اُترے شہ ِوالا

اور چاہا کہ برپا کریں خیمہ لب ِ دریا

مانع ہوے یک بار پرا باندھ کے اعدا

حضرت نے کہا خیر جو کچھ مرضی ِمولا

جو ہم پہ جفا ہوگی رہ ِحق میں سہیں گے

ساحل سے کنارا کیا ریتی پہ رہیں گے

Edited by Haji 2003

Share this post


Link to post
Share on other sites

ہفتم سے محرم کی تو پانی بھی ہوا بند

فرزند ِپیمبر کے تڑپنے لگے فرزند

تھی فاطمہ کے مہر میں وہ نہر بھی ہر چند

غاصب نہ ہوئے پانی کے دینے پہ رضامند

حق اپنا محمد کے نواسے نے نہ پایا

اک پانی کا قطرہ کسی پیاسے نے نہ پایا

چوبیس پہر پیاس میں بچوں نے گزارے

ہچکی علی اصغر کو لگی پیاس کے مارے

آخر ہوئ جب دسویں شب اور چھپ گئے تارے

شہ رن کو نماز ِسحری پڑھ کے سدھارے

واں جاتے ہی تیغوں سے قلم ہو گیا لشکر

تھا ایک تو کم اور بھی کم ہو گیا لشکر

خاموش انیس اب کہ بہت رونے کا ہے جوش

ہوگی نہ محبوں کو تری یاد فراموش

اللہ نے بخشی ہے جنہیں چشم ِخطا پوش

کب دیکھتے ہیں نقص کو وہ عاقل و زی ہوش

تعریف کریں خاص تو ہے کام کی تعریف

کب اہل ِ سخن مانتے ہیں عام کی تعریف

ختم شد

Edited by Haji 2003

Share this post


Link to post
Share on other sites

Join the conversation

You are posting as a guest. If you have an account, sign in now to post with your account.
Note: Your post will require moderator approval before it will be visible.

Guest
Reply to this topic...

×   Pasted as rich text.   Paste as plain text instead

  Only 75 emoji are allowed.

×   Your link has been automatically embedded.   Display as a link instead

×   Your previous content has been restored.   Clear editor

×   You cannot paste images directly. Upload or insert images from URL.

Sign in to follow this  

×
×
  • Create New...