Jump to content
sharib

lafz e tishnalabi : a Salaam

Recommended Posts

سلام

سید اقبال رضوی شارب
 
ہماری سوچوں میں رہتا ہے لفظ تشنہ لبی
ہماری ذات کا حصّہ ہے لفظ تشنہ لبی
 
جو پھیل جائے    تو  تفسیرِ کربلا ہے یہی
سمٹ کے  ظلم  کا نوحہ ہے لفظ تشنہ لبی
 
ستم کا تیر  تبسّم  پہ جس نے   روک لیا
اسی  کی یاد دلاتا  ہے لفظ تشنہ لبی
 
شبیہ مرسلِ اعظم کے چوڑے سینے پر
یہ کس نے برچھی سے لکّھا ہے لفظ تشنہ لبی

یہ سچ ہے خشکی و صحرا بھی فہم ہے  اسکا 
ہمیں تو خون کا دریا ہے لفظ تشنہ لبی
 
عطش عطش کی صدائیں ڈھلے ڈھلے اجسام
بتائیں  کیسے کہ کیا کیا ہے لفظ تشنہ لبی

اسی سبب سے  تو اتنا اداس ہے شارب
کہ دل میں ٹیس اٹھاتا  ہے لفظ تشنہ لبی

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now


×