Jump to content
Sign in to follow this  
sharib

manqabat : جانے کتنوں کے مقدّر میں تو پتھر نکلا

Recommended Posts

منقبت
سید اقبال رضوی شارب

 

جانے کتنوں کے مقدّر میں تو پتھر نکلا

شکرِ معبود کہ رہبر مرا حیدر نکلا

 

جب بھی امواجِ حوادث نے بکھیرا مجھکو

ڈوب کر بحر مودّت میں تونگر نکلا

 

کیسے کہہ دوں کہ وہ ششماہا یقیناً تھا صغیر

جو اکیلا کئی لشکر کے برابر نکلا

 

غرقِ ظلمت جو مسلماں ہوا بعدِ مرسل

تا دمِ حال اندھیروں سے نہ باہر نکلا

 

جن کو اعلان غدیری سے نہ تھا کوئی ملال

ان میں سلمان کوئی کوئی ابو زر نکلا

 

دست ہو آنکھ ہو چہرہ ہو کہ شمشیر خدا

شخص واحد سبھی اوصاف کا مظہر نکلا

 

رات بھر قتل کی سازش ہی میں جاگے کفّار

ہوش گم ہو گئے بستر پہ جو حیدر نکلا

 

ہے دعا لوگ پسِ مرگ کہیں اے شارب

تیری تقدیر میں تو حر کا مقدّر نکلا

Share this post


Link to post
Share on other sites
On ‎4‎/‎13‎/‎2016 at 9:51 PM, sharib said:

منقبت
سید اقبال رضوی شارب

 

جانے کتنوں کے مقدّر میں تو پتھر نکلا

شکرِ معبود کہ رہبر مرا حیدر نکلا

 

جب بھی امواجِ حوادث نے بکھیرا مجھکو

ڈوب کر بحر مودّت میں تونگر نکلا

 

کیسے کہہ دوں کہ وہ ششماہا یقیناً تھا صغیر

جو اکیلا کئی لشکر کے برابر نکلا

 

غرقِ ظلمت جو مسلماں ہوا بعدِ مرسل

تا دمِ حال اندھیروں سے نہ باہر نکلا

 

جن کو اعلان غدیری سے نہ تھا کوئی ملال

ان میں سلمان کوئی کوئی ابو زر نکلا

 

دست ہو آنکھ ہو چہرہ ہو کہ شمشیر خدا

شخص واحد سبھی اوصاف کا مظہر نکلا

 

رات بھر قتل کی سازش ہی میں جاگے کفّار

ہوش گم ہو گئے بستر پہ جو حیدر نکلا

 

ہے دعا لوگ پسِ مرگ کہیں اے شارب

تیری تقدیر میں تو حر کا مقدّر نکلا

Thanks Ana Kazmi

wassalam

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

Sign in to follow this  

×