Jump to content
Sign in to follow this  
talib e ilm

Lets Ask Imam Hussain A.s About His Movement

Recommended Posts

As we know Imam Hussain Commenced his journey during 60th Hijri and got Martyred in the beginning of 61st Hijri,

I want to share One of the most important Event of 59th Hijri which we normally nver heard in Majalis e Aza or any occassions.

We can say during 59th Hijri Imam Hussain a.s actually started his unforgettable Movement. During 59th Hijri and before the season of Hujj Imam Hussain a.s sent a letters to all the Leaders or Kings of Islamic states present at that time, all the famous ulemas irrespective whom they follow Ahlulbayt or Companions, Ulemas of Bani Abbas and Ummaya, All the famous people who were playing an active or responsible part in their own Areas and even the Trustees or those who Look after Mosques & Kaba. Imam Hussain insisted in the letters that they must attend Hujj this year (59th Hijri).

After Manasik e Hujj When all of them gathered in Makkah Imam delivered a Comprehensive Khutba and insist people to write His words and forward to those who are not present. Our sources says near or more than a thousand of Peoples are gathered in a tent to listen a wordings of Infallible Imam.

Imam a.s commenced his sermon from Tauheed then through a light on Nabuwat and Imamat. He quoted Fazail of Mola Ali a.s and asked all the listeren Am I Right,? Am I Right,? They replied "Ya Abi Abdillah! Yes You are Right!"

This sermon is too long and unique one, But here I would only quote some of his statement which is indeed very important and expose the reality of his Movement.

Majority of Scholars, Ulemas or Allamas are present their, so Imam a.s said:

"Kya tum logo nay nahi dekha k is tagoot (pointing to Mavia) nay Hum Ahleybait, Humaray Shia or is Deen k sath kia kia?

Aye grouh e ulama, loog tumhari izzat kartay hain, tum apni khuwahishat sa dastbardaar nai hotay or loog apni zaroriat e zindage tark kar k tumhari khuwahishaat pori kartay hain, tum zameen per jageerdaro ki tarah chaltay ho, yay sab is liay hai k tum deen e khuda say mansoob ho, agar chay tum sab Huq ko pamaal karnay walay ho, ab tuk tum nay rah e Khuda may kutch kharch nahi kya, Na tumharay badun per raah e khuda me mamoli choot aye, na tum nay raah e Khuda may dushmania mool li hain, yay Gair-Zimaydarana deen apnanay k bad dua go ho k khuda tumhay Rasoolo ki Humrahi naseeb karay? , or aye woh jo Khuda ki Naimato ki umeedo may ho!, Mujhay tou yay khoof hai k khuda ka azaab tum pr na ajae k jo Inayat or Naimat Khuda nay tumhay ata ki the, tum nay us may khayanat ki

Aye Ulma e Deen, Tum Ahd e Khuda ko toot'ta dekh rahay ho or uthtay nahi ho, jub k tumharay Aabaa ki rasmein toot jaen tou foran kharay ho jatay ho, Aye Andho(Blind) Aye Goongo, Aye Baihron! Tum nay shehro(cities) k ander yay rivaj apna rakha hai k zalim zulm kar raha ha tum chup saat k baithay ho. Na shehro k ander ja kr koi zimaydari nibhatay ho na ghero may beth kr koi amal kartay ho. agar koi raah e khuda may nikalta ha tou us ki himayat b nahi kartay, bulkay tum susti dekha kar zalimo ki qurbat hasil kartay ho, yay sab is k bawajood ha k khuda nay tumhay hukum deya hai k tum nahi un il munkir karo, lakin tum ghaflat ki zindage guzar rahay ho, Khuda nay Zamaam (Authority) ulma k hatho may de the, lakin tum sa wo sab cheen lia gya ha q k tum huq per tafarka kar rahay ho, Agar tum mushkilat jheylnay waly hotay tou saaray umoor zalimo k hath sa tumhari taraf ajatay or tumhari taraf rojo hota, lakin tum nay apni kursi zalimo ko dey de or tum nay pora deen utha kar zalimo k supurd kar deya wo aj shubhaat or khuwahishaat per amul kar rahay hain,

Maut k khoof nay tumharay upper zalimo ko musallat kar deya hai yay jo tum zindagi sa muhabbat kartay ho is nay tumhay magloob kr deya ha, Tum nay kamzoro ko zalimo k hawalay kya ha, tumhari waja sa gareeb pis rahay hain, Hur Minber per darbari khateeb tumhari waja sa Baith'ta ha. Ta'ajub ha mujhay tum pr or q na ho tum apni Namazo may lagay huay ho or ummat k upper Zalim o Sitamgaar or Tagoot baitha hua hai,

May tumharay or apnay darmiyan khuda ko qazi banata hon, Aye Parwardigar! May nay in sab per Atmaam e Hujjat kar de, May iqtidaar k hosool k liay koshish nahi kar raha, may is liay qayam kar raha ho k tera deen pamaal ho raha hai, may teray shehar may islah ka irada rakhta ho, ma is liay ja raha ho k teray bando ko amun mil jae, Agr tum nay meri madad nahi ki yad rakhna ma SHAHEED ho jao ga or yay zalimeen tum per musallat ho jaen gae, wo tumharay Nabi k noor ko bhuja dain gae!! Mera bhrosa, Tawakul or Rojo khuda ki taraf ha

KHUTBA TUL MINA

Ref: Kalimaat e Imam Hussain a.s, Encyclopedia of Imam Hussain a.s in Arabi (not translated in urdu)

I found the sermon in the Majlis of Ustaad Aga Syed Jawad Naqvi, He recite the complete sermon at Shab e Chehlum (IRC) previous year.

Then in 60th Hijri, when Imam reached Makkah and asked the Hajiis

"Aye logo apna Ahraam kholo or Kafan pehan lo, k ab Hujj karnay ka wakt nahi ab Hujj bachanay ka wakt agaya ha." they replied "Kaba siyasat ki jaga nahi ibadat ki jaga ha, agar Ap nay Siyasat karni hai tou Kabay say bahir jain."

I would only say "Yay khutba aj bhi Apnay Mukhatibeen Talash kar raha hai."

Edited by talib e ilm

Share this post


Link to post
Share on other sites

Aik Pakistani Alim jo k ilaqay k baray ulama may shumar hotay hain, or aik madersay k principal b hain, may nay inhay yay khutba paish kia or in se pocha ap ka kia kahna hai, in ka jawab mulahiza kijyay:

"Gaibat e Imam may Amr bil Maroof or Nahi Un il Munkir jaiz nahi hai, Yay Imam e Zamana ka kaam hai k Momineen ki jaan per tasaruf karay, lihaza ap ko zulm k khilaf kutch nahi kahna or rahi baat is khutba e Mina ki tou us wakt Imam Hussain a.s mojood thay lihaza jo alim un ki mojoodgi k bawajood kaam nahi kar rahay thay wo batil hain humay q k Gaibat ka samna hai liahaza qayam nahi karna."

Kia Imam Khomeini b inhi Alim ki tarah sotchtay thay ? Q Imam Khomeni r.a ney Iraq sey difa k doran jihad ka fatwa deya tha ? or jis k natejay may kai lakh Shia maray gae? kia humaray khilaf kaam nahi ho raha? kia sazish nahi ho rahi kia aj musalman ki jan mal or izzat mahfooz hain, kia is jawab se hum yay nateeja nikalain k Agar humay koi aik thappar maar dey tou hum dosra gaal us k samnay rakh dain or sath Al Ajal b kah lain ? is tarah tou Quran ki kai kai Ayaat aise rah jaein ge jin per hum Gaibat k doran amul nahi kar saktay ... yanay shariat pori aa gae, adi per amul karna wajib hai or adi shariat ko side per rakh dein..

Jo is hal may subah karay k Umoor e Muslimeen say La ta'aluq ho wo Musalman nahi

Imam Reza a.s

Share this post


Link to post
Share on other sites

Maah e Muharram, Maah e Difa e Hurmat e Deen wa Maah e Difa e Hurmat e Rasool e Khuda s.a.w.w ha

humay chahyay wo Azadari barpa karain jis se hum us maqsad ki taraf paish qadmi karain jis k liay Imam nay apna sab kutch Fida kar deya..

Koi aise cheez hai jo Mola Hussain a.s ko Hazrat Ali Asgher or Hazrat Ali Akber a.s se piyari hai, apni humshera ki chadar se ziada aziz ha, wo Hurmat e Deen e Khuda ha

yahi rooh e Azadari ha..

Azadari faqat chand rasmain baja lanay or sawab k hosool k liay nahi hai, Maqsad e Aza Yazediat k khilaf Nabard azmaa hona ha

q hum faqat ghero may azadari na karain ?

or roads per juloos wagaira nikalnay ki zarorat kia hai ?

kiun k Yazediat ko ghero may beth kar nahi pukara ja sakta, deen ka difa ghero may nahi ho sakta..

Juloos may rasmun shareek nahi hona chahyay, Jaloos e Aza Yazeed e wakt k khilaf ailaan e jang ha..

Edited by talib e ilm

Share this post


Link to post
Share on other sites

بجائے اس کے کہ ایک ہی موضوع پر نئے تھریڈ بنائے جائیں میں نے سوچا کہ اس پرانے تھریڈ کو ہی جاری رکھا جائے


*********************************


 


اگر ہم قیام سید شھداء (ع) پر نگاہ کریں اور اس حوالے سے خود فرامین امام حسین ؑ کو دیکھیں تو یقیناً ہم اس نتیجے پر پہنچیں گے کے قیام سید شھداء کی اصلی وجوہات یہ تھیں۔۔


 



یزید کا خلیفہ بننا اور خلافت پر آتے ہی بیعت کا سوال کرنا


 



کوفیوں کے خطوط کے باعث ان پر اتمام حجت کرنا



رسول خدا (ص) کی امت کی اصلاح یعنی امر بلمعروف اور نہی عن المنکر   جو امام کا اصلی ھدف تھا


 


خدا سے دعا ہے کہ ان تمام عوامل کو دلائل اور حوالہ جات کے ساتھ بیان کر نے کی توفیق نصیب ہو تاکہ ہم پر واضح ہو کہ قیام امام حسین ؑ کی حقیقت کیا تھی، یہ موضوع ہر انسان کے لئے اہم ہے مگر ایک عزادار کے لئے انتھائی اہمیت کا حامل ہے، اگر یہ موضوع حل ہو جائے تو ہم جان لیں گے کہ وہ کیا چیز ہے جس کی قیمت اور ارزش امام حسین ؑ کے لئے اپنے خون سے زیادہ ہے، اور جس کی قیمت امام کے لئے اپنی اولاد، اصحاب اور چاہنے والوں سے بھی بڑھ کر ہے۔۔ وہ کیا چیز ہے کہ جس کی خاطر امام خود اپنے اہل و عیال کو قربان کرنے پر آمادہ ہیں۔۔۔


Share this post


Link to post
Share on other sites

بعض کہتے ہیں امام حسین ؑ اس مسئلہ خلافت سے لاتعلق اور غیر جانبداررہنا چاہتے تھے اور یزید کے لئے خلافت میں کوئی رکاوٹ ایجاد نہیں کرنا چاہتے تھے وہ یزید تھا جس نے امام حسین ؑ کو کربلا میں گھیر لیا اور یہ واقعہ رونما ہوا۔۔


یہ نظریہ درست نہیں امام حسین ؑ فرماتے ہیں


 


إِنّا لِلّهِ وَإِنّا إِلَیْهِ راجِعُونَ وَعَلَى الاِْسْلامِ اَلسَّلامُ إِذْ قَدْ بُلِیَتِ الاُْمَّةُ بِراع مِثْلَ یَزیدَ وَ لَقَدْ سَمِعْتُ جَدِّی رَسُولَ اللهِ(صلى الله علیه وآله) یَقُولُ: «اَلْخِلافَةُ مُحَرَّمَةٌ عَلى آلِ أَبِی سُفْیانَ فَإِذا رَأَیْتُمْ مُعاوِیَةَ عَلى مِنْبَرى فَاَبْقِرُوا بَطْنَهُ» وَقَدْ رَآهُ اَهْلُ الْمَدینَةَ عَلَى الْمِنْبَرِ فَلَمْ یَبْقَرُوا فَابْتَلاهُمُ اللهُ بِیَزیدِ الْفاسِقِ


 


ہم خدا کی طرف سے ہیں اور اسی کی طرف پلٹنا ہے! اور جب امت یزید جیسے حکمرانوں میں مبتلا ہوجائے تو اسلام کی فاتحہ پڑھ دینی چاہیئے اور بتحقیق میں نے اپنے نانا رسول خدا (ص) سے سنا ہے وہ فرماتے ہیں کہ : خلافت آل ابوسفیان پر حرام ہے، پس جب تم معاویہ کو منبر پر دیکھو تو اسے ختم کردو۔۔۔  اب لوگوں نے اسے منبر پر دیکھا اور نہیں مارا نتیجتاً خدا نے انھیں یزید جیسے فاسق حکمران میں مبتلا کردیا



لهوف، ص 20؛ ومثیرالاحزان، ص 10.


 



***********************************************************************************


 


کوفیوں پر اتمام حجت بھی ضروری مرحلہ تھا کیونکہ جب کوفیوں کو خبر ملی کے امام حسین ؑ نے یزدید کی بیعت سے انکار کردیا ہے تو امام حسین ؑ کی حمایت میں خط لکھے اور یقین دلایا کہ آپ کوفہ آئیں ہم آپ کی نصرت کے لئے آمادہ ہیں۔۔۔  ایک روایت کے مطابق ۱۸۰۰۰ اٹھارہ ہزار خط امام کو موصول ہوئے۔ اگر امام ؑ ان پر حجت تمام نہیں کرتے اور اپنے سفیر حضرت مسلم ابن عقیل کو انکی طرف نہ بھیجتے تو واقعہ کربلا کے بعد کوفیوں کو یہ کہنے کا جواز مل جاتا کہ ہم تو آمادہ تھے امام نے ہماری دعوت قبول نہیں کی، پس کوفیوں کے چہرے سے نقاب اتارنا بھی ضروری تھا۔


 


یہاں ایک نکتہ اہم ہے اور وہ یہ کہ امام حسینؑ کا یزید کی بیعت سے انکار کوفیوں کے بھروسے پر نہیں تھا ان دونوں باتوں کا آپس میں کوئی تعلق نہیں- امام حسینؑ جانتے تھے کہ کوفی وفادار نہیں ان پر تقیہ نہیں کیا جاسکتا انہوں نے بابا علی اور بھائی حسن ؑ کے ساتھ بھی بے وفائیاں کیں ہیں۔ حتی امام نے بیعت سے انکار پہلے کیا تھا اور خطوط کا سلسلہ بعد میں شروع ہوا۔ پس اگر کوئی سوال اٹھائے کہ اگر کوفی خطوط نہ لکھتے تو کیا امام قیام کرتے ؟ تو جواب یہی ہوگا کہ جی ہاں ! کیونکہ قیام کا محرک کوفیوں کے خطوط نہیں تھے جیسا کہ امام کے خطبات سے یہ بات واضح ہے۔۔


 


ابن عباس جو امام حسین ؑ کے کزن تھے امام کو مشورہ دیتے ہیں: میں نے سنا ہے کہ آپ نے عراق کا ارادہ کیا ہے اس کے باوجود کے آپؑ جانتے ہیں کہ یہ لوگ فریب کارہیں اور آپ کو جنگ میں تنہا چھوڑ دیں گے، لہذا جلدی نہ کریں اور مکہ میں ہی ٹھر جائیں۔۔


 


امام حسین ؑ نے جواب میں فرمایا: «لاَنْ اُقْتَلَ وَاللّهِ بِمَکان کَذا اَحَبَّ اِلَىَّ مِنْ اَنْ اُسْتُحِلَّ بِمَکَّةَ، وَ هذِهِ کُتُبُ اَهْلِ الْکُوفَةِ وَ رُسُلُهُمْ وَ قَدْ وَجَبَ عَلىَّ اِجابَتُهُمْ وَ قامَ لَهُمُ الْعُذْرُ عَلَىَّ عِنْدَ اللّهِ سُبْحانَهُ»؛


 


اگر میں وہاں مارا جائوں تو یہ میرے نزدیک زیادہ پسندیدہ ہے بجائے اس کے کہ میں یہیں پر ٹھر جائوں اور مکہ کی حرمت پامال ہوجائے۔۔۔ اس کے علاوہ یہ کوفیوں کے خطوط ہیں، مجھ پر لازم ہے کہ ان کی دعوت کا جواب دوں تاکہ حجت ِ خدا ان پر تمام ہوجائے۔



معالى السبطین، ج 1، ص 246


 



************************************************************************


Edited by talib e ilm

Share this post


Link to post
Share on other sites

انکار بیعت کے بعد جب امامؑ نے مدینہ سے سفر کا ارادہ کیا تو ابو حنفیہ جو امام ؑ کے بھائی اور امام علیؑ کے فرزند تھے انھیں وصیت لکھ کر دی اور حکم دیا کہ آپ مدینہ میں ہی ٹھریں اور ہمیں مدینہ کے حالات سے باخبر کرتے رہیں۔


بِسْمِ اللّهِ الرَّحْمنِ الرَّحیمِ» هذا ما أَوْصى بِهِ الْحُسَیْنُ بنُ عَلِىِّ بْنِ أَبِی طالِب إِلى أَخیهِ مُحمَّد الْمَعْرُوفِ بِابْنِ الْحَنَفِیَّةِ: أَنَّ الْحُسَیْنَ یَشْهَدُ أَنْ لا إِلهَ إِلاَّ اللّهُ وَحْدَهُ لا شَریکَ لَهُ، وَ أَنَّ مُحَمَّداً عَبْدُهُ وَ رَسُولُهُ، جاءَ بِالْحَقِّ مِنْ عِنْدِ الْحَقِّ، وَ أَنَّ الْجَنَّةَ وَ النّارَ حَقٌّ، وَ أَنَّ السّاعَةَ آتِیَةٌ لارَیْبَ فیها، وَ أَنَّ اللّهَ یَبْعَثُ مَنْ فِی الْقُبُورِ، وَ أَنّی لَمْ أَخْرُجْ أَشِراً وَ لا بَطِراً وَ لا مُفْسِداً وَ لا ظالِماً وَ إِنَّما خَرَجْتُ لِطَلَبِ الاِصْلاحِ فِی أُمَّةِ جَدِّی، أُریدُ أَنْ آمُرَ بِالْمَعرُوفِ وَ أَنْهى عَنِ الْمُنْکَرِ وَ أَسیرُ بِسیرَةِ جَدِّی وَ أَبی عَلىِّ بْنِ أِبی طالِب(علیه السلام)، فَمَنْ قَبِلَنِی بِقَبُولِ الْحَقِّ فَاللّهُ أَوْلى بِالْحَقِّ وَ مَنْ رَدَّ عَلَىَّ هذا أَصْبِرُ حَتّى یَقْضِىَ اللّهُ بَیْنی وَ بَیْنَ الْقَوْمِ بِالْحَقِّ وَ هُوَ خَیْرُ الْحاکِمینَ، وَ هذِهِ وَصِیَّتِی یا أَخی اِلَیْکَ وَ ما تَوْفیقی إِلاّ بِاللّهِ عَلَیْهِ تَوَکَّلْتُ وَ إِلَیْهِ أُنیبُ

 

یہ وصیت ہے حسین ابن علیؑ کی اپنے بھای محمد حنفیہ کے لئے : حسین ؑ شھادت دیتا ہے کہ خدا کے سوا کوئی معبود نہیں اور محمدؑ انکے بندے اور رسول ہیں جو حق تعالی کی طرف سے حق کے ساتھ مبعوث ہوئے ہیں، اور یہ کہ جنت اور جہنم حق ہے اور روز حساب بغیر کسی شک کے آنے والا ہے، اور خداوند قبر میں سونے والوں کو دوبارہ ضرور اٹھائے گا۔ اور میں طغیان، فساد، اور ظلم و ستم کے لئے قیام نہیں کر رہا ہوں، بلکہ صرف اپنے نانا رسول خد(ص) کی امت کی اصلاح چاہتا ہوں، اور میں چاہتا امر بلمعروف و نہی عن المنکر کروں اور اپنے جد رسول خدا اور پدر گرامی علی ابن ابی طالبؑ کی سیرت پر عمل کروں، جس نے حق بات میں میرا ساتھ دیا، وہ خدا سے اس کا اجر پائے گا، اور جس نے میری دعوت کو قبول نہیں کیا، تو میں انتظار کروں گا یہاں تک کہ خدا میرے اور ان لوگوں کے درمیان حق کے ساتھ فیصلہ کرے، کہ خدا بھترین فیصلہ کرنے والا ہے۔

 

مقتل الحسین خوارزمى، ج 1، ص 188-189. فتوح ابن اعثم، ج 5، ص 33-34

Edited by talib e ilm

Share this post


Link to post
Share on other sites

بغص اہل فکر حضرات کا نظریہ یہ ہوتا ہے کہ اسلام کا معاشرے کے کسی شعبے سے کوئی تعلق نہیں۔ اسلام کا سیاست، حکومت، داخلی اور خارجی مسائل، اقتصاد، سماج، تعلیم اور کسی شعبے سے کوئی تعلق نہیں۔ ان تمام امور میں ترقی کے لئے ہمیں مغرب کی طرف رخ کرنا چاییئے۔ یعنی معاذاللہ اسلام آج کے دور کے جدید تقاضوں کو پورا نہیں کرسکتا کیونکہ ان کے نزدیک ایک مسلمان کا اسلام سے تعلق فقط مسجد، خانقاہ، کلیسا اور امام بارگاہ کی حد تک ہونا چاہیئے۔ ایسے افراد کو ہم لبرل یا سیکیولر بھی کہہ سکتے ہیں۔ اور ان حضرات کی کوشش ہوتی ہے کہ واقعہ کربلا سے بھی ان تمام پھلووں سے صرف نظر کیا جائے اسی لئے قیام پاک سید شھداء کو مشکوک ثابت کرتے ہیں اور عجیب و غریب توجیھات کرتے ہیں ان سب کے لئے عرض ہے کہ

 

امام حسین ؑمعاذاللہ لبرل اور سیکیولر نہیں تھے۔

 

اسلام جن کے دوش پر پلا ہے آئیے ان سے بھی رائے لیں۔ امام حسینؑ نے ایک مقام پر کوفیوں کو خط لکھا اوراسطرح خطاب کیا

 

بِسْمِ اللهِ الرَّحْمنِ الرَّحیمِ، مِنَ الْحُسَیْنِ بْنِ عَلِىٍّ إِلى سُلَیْمانِ بْنِ صُرَد، وَ الْمُسَیِّبِ بْنِ نَجْبَةَ، وَ رُفاعَةِ بْنِ شَدّاد، وَ عَبْدِاللهِ بْنِ وال، وَ جَماعَةِ الْمُؤْمِنِینَ، أَمّا بَعْدُ: فَقَدْ عَلِمْتُمْ أَنَّ رَسُولَ اللهِ(صلى الله علیه وآله) قَدْ قالَ فِی حَیاتِهِ: «مَنْ رَأى سُلْطاناً جائِراً مُسْتَحِلاًّ لِحُرُمِ اللهِ، ناکِثاً لِعَهْدِ اللهِ، مُخالِفاً لِسُنَّةِ رَسُولِ اللهِ، یَعْمَلُ فِى عِبادِاللهِ بِالاِثْمِ وَ الْعُدْوانِ ثُمَّ لَمْ یُغَیِّرْ بِقَوْل وَ لا فِعْل، کانَ حَقیقاً عَلَى اللهِ أنْ یُدْخِلَهُ مَدْخَلَهُ». وَ قَدْ عَلِمْتُمْ أَنَّ هؤُلاءِ الْقَوْمَ قَدْ لَزِمُوا طاعَةَ الشَّیْطانِ، وَ تَوَلَّوْا عَنْ طاعَةِ الرَّحْمنِ، وَ اَظْهَرُوا الْفَسادَ، وَ عَطَّلُوا الْحُدُودَ وَاسْتَأْثَرُوا بِالْفَیءِ، وَ أَحَلُّوا حَرامَ اللّهِ، وَ حَرَّمُوا حَلالَهُ، وَ إِنِّی أَحَقُّ بِهذَا الاَمْرِ لِقَرابَتِی مِنْ رَسُولِ اللّهِ(صلى الله علیه وآله).

خدا کے نام سے جو بڑا مھربان رحم کرنے والا ہے، حسین ابن علیؑ کی جانب سے سلیمان بن صرد، مسیب بن  نجبہ، رفاعہ بن شداد، عبداللہ بن وال اور سب مومنین کوفہ کے نام:

تم سب جانتے ہو کے پیغمبر ص نے اپنی زندگی میں فرمایا تھا کہ تم میں سے جو کوئی بھی ظالم و ستمگر حکمران کو دیکھے کہ جو حرام خدا کو حلال کرتا ہو اور عھد الٰھی کو توڑتا ہو اور پیغمبر اکرم ص کی سنت کی مخالفت کرتاہو اور خدا کے بندوں کے درمیان ظلم و ستم کرتا ہو، لیکن (ایسے شخص) کے خلاف عملاً یا قولاً مبارزہ (قیام) نہ کریں پس وہ اس بات کے سزاوار ہیں کے اللہ ان سب کو اس ظالم ستمگار کے ساتھ ہی [جھنم] میں وارد کرے۔

تم جانتے ہو کہ اس گروہ [بنی امیہ] نے شیطان کی اطاعت پر کمر کس لی ہے اور خدا کی اطاعت سے دستبردار ہوگئے ہیں، فساد کو عام کردیا ہے اور حدود الہٰی کو پامال کردیا ہے، مسلمانوں کے بیت المال کو اپنے مفاد میں استعمال کرتے ہیں، حرام خدا کو حلال اور حلال خدا کو حرام شمار کرتے ہیں۔ اور میں پیغمبر ص سے قرابت اور نزدیکی رشتہ کی وجہ سے خود کو دوسروں سے زیادہ سزاوار سمجھتا ہوں کے ان لوگوں کے خلاف مبارزہ [قیام] کروں-

فتوح ابن اعثم، ج 5، ص 143-145 ; مقتل الحسین خوارزمى، ج 1، ص 234-235 و بحارالانوار، ج 44، ص 381-382

 

Edited by talib e ilm

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

Sign in to follow this  

×