Jump to content

sharib

Advanced Members
  • Content count

    1,060
  • Joined

  • Last visited

About sharib

  • Rank
    Member

Previous Fields

  • Gender
    Male

Recent Profile Visitors

2,289 profile views
  1. سید اقبال رضوی شارب (بہ حضور امام زمانہ ) ابن آدم ہوں گنہگار ہوں پہلے دن سے اور شفاعت کا طلبگار ہوں پہلے دن سے میں کہ اک حسرتِ دیدار ہوں پہلے دن سے تیری الفت میں گرفتار ہوں پہلے دن سے مجھکو صحت سے یہ بیماری بھلی ہے مولا میں ترے عشق میں بیمار ہوں پہلے دن سے تونے دے دے کے سہارا مجھے باقی رکّھا ورنہ گرتی ہوئی دیوار ہوں پہلے دن سے شکرِخالق بھی ہے ماں باپ کا مشکور بھی ہوں میں جو مولا کا طرفدار ہوں پہلے دن سے تم توواقف ہو مرے ظاہر و باطن کیا ہیں بہ خدا شہ کا عزادار ہوں پہلے دن سے دست بستہ یہ گزارش ہے کہ جلدی آؤ جاں ہتھیلی پہ میں تیار ہوں پہلے دن سے رکھ نہ پائی مجھے غفلت میں یہ دنیا شارب تجھ سے نسبت ہے تو بیدار ہوں پہلے دن سے
  2. غزل ( سید اقبال رضوی شارب ) خود ہی جب چن لیا اس جیسے کو نیتا اپنا پھر کسی شومئی قسمت کا گلہ کیا اپنا ہے تو ابلیس مگر زہد کا اوتار لگے اسنے کچھ ایسا بنا رکھا ہے حلیہ اپنا وہ جرائم ہیں کہ حیوان بھی تھرّا جآئے پھر بھی وہ دیتا ہے مجرم کو سہارا اپنا کچھ تو ایسے ہیں یہ فرعون بنامِ موسیٰ سارے چینل پہ روا رکھتے ہیں چرچا اپنا ہر طرف انس و محبّت کے جنازے نکلے مکر و عیّاری نے منوا لیا لوہا اپنا دھوپ میں لوگ نکل آئے تو گھبرا کے مگر اب انہیں خود نظر آتا نہیں سایہ اپنا عقل کے ایسے بھی اندھے ہیں یہاں پر شارب مانتے ہیں جو اسے اب بھی مسیحا اپنا
  3. سید اقبال رضوی شارب منقبت مرض موزی ہے یہ تاثیر میں سرطان ہوتا ہے علی سے بغض رکھنے میں بڑا نقصان ہوتا ہے عقیدہ کھوکھلا ایماں لہو لوہان ہوتا ہے جو کہتا ہے قراں کافی بڑا نادان ہوتا ہے یہ اہلِ بیت ہیں لوگو انہیں سمجھو ،انہیں جانو یہ جو کرتے چلے جایئں وہی قرآن ہوتا ہے فقط تلوار کی جلوہ نمائی سے جو تھرّائیں علمداری کا ایسوں کو بہت ارمان ہوتا ہے ہمیں اجرِ رسالت کے ادا کرنے سے جو روکے وہ ہر اک فیصلہ ردِّ نصِ قرآن ہوتا ہے غمِ سرور میں چشمِ تر سے ہر نکلا ہوا آنسو ہماری مغفرت کو اک بڑا سامان ہوتا ہے ضروری تو نہیں مرسل کی صحبت فیض دے سب کو وہی تاثیر لیتے ہیں جنہیں عرفان ہوتا ہے خدا کی کشتیِ دیں کو جو سمت و چال دے جائے غدیرِ خم کے میداں میں وہی اعلان ہوتا ہے سخاوت وہ جو اک در سے سبھی حاجت روا کر دے* کئی در سے مدد میں عنصرِ احسان ہوتا ہے یقیں سے شک کو جو کاٹے اسے مومن سمجھ شارب کہ شک ایماں کے حق میں موجبِ یرقان ہوتا ہے *When Hz.Ali was asked to comment on the sakhawat of Hatimtai who used to donate from seven doors: HE SAID that ok to give from seven doors but why not give as much from one door that there remains no need to go to the other door
  4. Khuda hamara Khuda

    wassalam sahi farmaya aap ne. space nahin hona chahiye. shukria oversight is regretted. ek aur typing error hai nikal hi jate "hain" be sakhta salaam apne منقبت (سید اقبل رضوی شارب ) خدا ہمارا خدا ناخدا امام اپنے اسی لئے توبگڑتے نہیں ہیں کام اپنے بزور اجر رسالت بوجہ قرب علی بنائے میثم و قنبر نے کیا مقام اپنے فقیرِ کاخِ درِ سیّدہ یہ کہتے ہیں ارم سے اچھے گزرتے ہیں صبح و شام اپنے نبی کی طرح علی کی حیاتِ سادہ دیکھ نکل ہی جاتے ہیں بے ساختہ سلام اپنے نجات پاؤں گا میں جانتا ہوں اے شارب ثنا ئے احمد و حیدر میں ہیں کلام اپنے iske liye bhi maazrat hai.
  5. منقبت (سید اقبل رضوی شارب ) خدا ہمارا خدا نا خدا امام اپنے اسی لئے توبگڑتے نہیں ہیں کام اپنے بزور اجر رسالت بوجہ قرب علی بنائے میثم و قنبر نے کیا مقام اپنے فقیرِ کاخِ درِ سیّدہ یہ کہتے ہیں ارم سے اچھے گزرتے ہیں صبح و شام اپنے نبی کی طرح علی کی حیاتِ سادہ دیکھ نکل ہی جاتے بے ساختہ سلام اپنے نجات پاؤں گا میں جانتا ہوں اے شارب ثنا ئے احمد و حیدر میں ہیں کلام اپنے
  6. منقبتِ جناب فاطمہ زہرا ع سید اقبال رضوی شارب چہرۂ اسلام پر تابندگی زہرا سے ہے اس لئے کینہ وروں کو دشمنی زہرا سے ہے ہمسرِ زہرا علی کی ہر خوشی زہرا سے ہے گلشنِ شیرِ خدا میں زندگی زہرا سے ہے نورِ عالم مصطفیٰ یہ نورِ چشمِ مصطفیٰ مرسلِ اعظم کے گھر میں روشنی زہرا سے ہے انکے والد انکا شوہر انکے دو لختِ جگر اہل بیتِ مصطفیٰ کی ہر کڑی زہرا سے ہے ابنِ آدم میں ہوئے ہیں مرسل و ہادی تمام بنتِ حَوَّاء میں فقط کل رہبری زہرا سے ہے عاشقی کا کون سا یہ روپ ہے میرے خدا عشقِ احمد لب پہ ہے پر کج روی زہرا سے ہے جس نے دی زہرا کو ایذا اس پہ ہے جنّت حرام کس قدر رب کی رضا رب کی خوشی زہرا سے ہے جس سے پیغمبر نے خود اپنی بقا منسوب کی وہ حسین ابنِ علی جانِ نبی زہرا سے ہے بیٹیاں سارے جہاں میں ہوتیں ہیں بنتِ ابی ہاں مگر وہ رشتۂ امِّ ابی زہرا سے ہے خطبۂ زینب میں پایا حیدر و زہرا کا عکس لہجہ تو حیدر سے ہے برجستگی زہرا سے ہے تیروں سے چھلنی بدن اک جاں بہ لب تشنہ دہن دشت کربل میں لٹا جو کچھ سبھی زہرا سے ہے گھر وہی شارب ملیں گے آپ کو جنّت مثال اہل خانہ کو جہاں کچھ آگہی زہرا سے ہے
  7. Salmunalikum, First of all I welcome your reaction. The last sher is not in that perspective in which you have understood it. Let me clarify that I do not mean that it is the responsibility of a woman to convert home into jannat. The couplet simply means that the momin , if he is really a momin (NOT EVERY SHIA) , has comfort and "sukoon" "barkat"," ibadat" etc in his house with his momina wife as the wife also is a kaniz e murtaza and has set standards of islam from the role model Bibi Zahra, like the men have from Prophet and Ali (as). If a momin has a jannat mesaal house ,it is with his own efforts and cooperation of his wife and the grace of Allah ba wasta e ahlulbait.. Those who torture their wives or do any human rights violations for any reason are not from momenin. I hope this suffices to clarify my stand. Even then if you feel hurt, I would express remorse that my sher offended you. Regards Sharib
  8. منقبت سید اقبال رضوی شارب ہمسرِ زہرا علی کی ہر خوشی زہرا سے ہے گلشنِ شیرِ خدا میں زندگی زہرا سے ہے انکے والد انکا شوہر انکے دو لختِ جگر اہل بیتِ مصطفیٰ کی ہر کڑی زہرا سے ہے ابنِ آدم میں ہوئے ہیں مرسل و ہادی تمام بنتِ حَوَّاء میں فقط کل رہبری زہرا سے ہے نورِ عالم مصطفیٰ یہ نورِ چشمِ مصطفیٰ مرسلِ اعظم کے گھر میں روشنی زہرا سے ہے خطبۂ زینب ہے برجستہ مگر کامل بلیغ لہجہ تو حیدرسے ہے برجستگی زہرا سے ہے عاشقی کا کون سا یہ روپ ہے میرے خدا عشق احمد لب پہ ہے پر دشمنی زہرا سے ہے جس سے پیغمبر نے خود اپنی بقا منسوب کی وہ حسین ابنِ علی جانِ نبی زہرا سے ہے بیٹیاں سارے جہاں میں ہوتیں ہیں بنتِ ابی ہاں مگر وہ رشتۂ *امِّ ابی زہرا سے ہے اس لئے شارب ہوئے مومن کے گھر جنّت مثال ہر کنیزِ مرتضیٰ کو آگہی زہرا سے ہے *Umm e Abiha was one of the Alqaab of Bibi Fatima Zahra (sa),this was bestowed on her by Prophet Muhammad (saw) himself
  9. سید اقبال رضوی شارب (منقبت بہ حضور امام زین العابدین (ع زندگی سجدوں ہی سجدوں میں بسر ہوتی ہے شام عابد کی یونہی یوں ہی سحر ہوتی ہے نور کو قید میں کیا روکیں گے ظلمت کے امیں روشنی رکتی نہیں محوِ سفر ہوتی ہے وقت کے ساتھ وسعت پاتا ہے قصرِ ایماں کفر کی پختہ حویلی تو کھنڈر ہوتی ہے وہی بن سکتا ہے موقع پہ فرز دق جسکو + منصبِ آلِ محّمد کی خبر ہوتی ہے طوق و زنجیر سے کیا روکو گے فتحِ عابد جنگ افکار کی حرمت سے بھی سر ہوتی ہے تو بھی سجد ے میں کبھی ویسے ہی تھرّا شارب ** بندگی تیری جو عابد کی ڈگر ہوتی ہے +Very famous incident of Arabian litt.,when during the haj the crown princeHisham of bani ummayyid could not perform "tawaf e kaaba" due to heavy crowd, however, as soon as ImamZainul Abideen came ,the same crowd gave way to him for tawaaf. Someone close to Hisham asked " who is this gentleman ?"Hisham knowing fully well replied "I do not know".This triggered his own court poet " farazdaq"to react and write a poetry in praise of Imam ZainulAbideen in which he told who is Imam ZainulAbideen** Imam ZainulAbideen used to shiver during hi prayers though he was so pious
  10. salam to uncle wah khoob sher kaha shukria for appreciation
  11. bahot shukria bhai Ashvazdanghe aur Salsabeel wassalam
×